ایرانی صدر اور حماس رہنما کا ٹیلی فون پر رابطہ، امریکی صہیونی سازش کیخلاف عالم اسلام کے اتحاد پر زور

تہران، 12 دسمبر، ارنا - صدر اسلامی جمہوریہ ایران نے کہا ہے کہ فلسطینی قوم کے حقوق کے مکمل حصول تک نئی انتفاضہ جاری رہے گی اور عالم اسلام بالخصوص تمام فلسطینی گروہ امریکہ اور صہیونیوں کی سازشوں کے خلاف یکجا اور متحد رہیں.

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر 'حسن روحانی' نے فلسطین کی مزاحمتی تنظیم حماس کے رہنما 'اسماعیل ہنیہ' کے ساتھ ایک ٹیلی فونک رابطے میں گفتگو کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر صدر روحانی نے کہا کہ امریکی اور صہیونی سازشوں کی ناکامی کے لئے تمام فلسطینی گروہوں کا اتحاد ناگزیر ہے.

انہوں نے فلسطینی عوام کو حقوق ملنے تک انتفاضہ کی نئی لہر کا سلسلہ جاری رہے گا.

ایرانی صدر نے مزید کہا کہ بیت المقدس کے خلاف امریکی صدر کا توہین آمیز فیصلہ عالم اسلام اور تمام مسلمانوں کے خلاف ایک مذموم سازش ہے جسے ناکام بنانے کے لئے اسلام اسلام کو متحد اور یکصدا ہونا پڑے گا.

انہوں نے اس اطمینان کا اظہار کیا کہ مظلوم فلسطینی اور مسلم امہ اتحاد، مزاحمت اور بہادری کے ساتھ امریکہ اور صہیونی سازشوں کو ناکام بنادیں گی.

ڈاکٹر روحانی نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران امریکی صدر کے بیت المقدس کے حوالے سے فیصلے کو شدید الفاظ میں مذمت کرتا ہے.

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اسلامی جمہوریہ ایران ہمیشہ کی طرح صہیونیوں کے خلاف فلسطینی قوم کے ساتھ کھڑا ہے اور ہمیں یقین ہے کہ فلسطین کی نئی انتفاضہ صہیونیوں کی شکست اور فلسطینی قوم کے حقوق کے حصول کے لئے کامیاب رہے گی.

اس موقع پر حماس رہنما اسماعیل ہنیہ نے فلسطین کی بھرپور حمایت جاری رکھنے پر حکومت ایران کا شکریہ ادا کرتے ہوئے دیگر اسلامی ممالک پر زور دیا کہ وہ اسلامی تعاون تنظیم کے غیرمعمولی سربراہی اجلاس میں القدس کے تحفظ اور فلسطینی قوم کا بھرپور دفاع کریں.

انہوں نے مزید کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کا فیصلہ اسلامی امہ کے حقوق بالخصوص فلسطینی عوام کے حقوق کی کھلی خلاف ورزی ہے.

اسماعیل ہنیہ نے کہا کہ فلسطینی قوم اسلامی جمہوریہ ایران کی حمایت اور از کے کردار کو قدر کی نگاہ سے دیکھتی ہے.

انہوں نے مزید کہا کہ فلسطینی عوام امریکہ اور صہیونیوں کی سازشوں کو ناکام بنانے کے لئے پُرعزم ہیں.

274**

ہمیں اس ٹوئٹر لینک پر فالو کیجئے. IrnaUrdu@