القدس پر ٹرمپ کا فیصلہ اقوام متحدہ کی قراردادوں کی خلاف ورزی ہے: بروجردی

تہران، 11 دسمبر، ارنا - سنیئر ایرانی رکن پارلیمنٹ نے کہا ہے کہ القدس فلسطین کے دل کی دھڑکن ہے اور امریکی صدر کی جانب سے اسے صہیونی دارالحکومت تسلیم کرنا اقدام اقوام متحدہ کی قراردادوں کی کھلی خلاف ورزی ہے.

یہ بات مجلس (پارلیمنٹ) کی قومی سلامتی اور خارجہ پالیسی کمیٹی کے چیئرمین 'علا الدین بروجردی' نے ایران میں تعینات فلسطین کی اسلامی مزاحمتی تحریک (حماس) کے نمائندے 'خالد القدومی' کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کہی.

اس موقع پر انہوں نے اسلامی دنیا میں مسئلہ فلسطین کی اہمیت کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ رہبر معظم ہمیشہ مسئلہ فلسطین کو اسلامی جمہوریہ ایران کی پہلی ترجیح قرار دے کر مظلوم فلسطینی قوم کی حمایت اور تمام مقبوضہ علاقوں کی آزادی پر زور دے رہے ہیں.

بروجردی نے ٹرمپ کے جاہلانہ اقدام پر اپنے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ القدس شریف مسلمانوں کا پہلا قبلہ گاہ اور فلسطینی سرزمین سے الگ نہ ہونے والا حصہ ہے جس کو مسلمانوں اور پورے عالم اسلام کے درمیان اہم حیثیت حاصل ہے.

انہوں نے کہا کہ امریکی صدر کی جانب سے بیت المقدس کو ناجائز صہیونی ریاست کے دارالحکومت تسلیم کرنے کا بیوقوفانہ اقدام کے خلاف اسلامی دنیا مخالفت کے نعرے بلندکررہے ہیں.

سنیئر ایرانی رکن پارلیمنٹ نے سعودی عرب اور ناجائز صہیونی ریاست کے درمیان تعلقات کو معمول پر لانے کی پالیسی کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ جابر صہیونیوں کی اس ناکام پالیسی سعودی عرب کے لئے ضرر رساں ہوجائے گی.

بروجردی نے مظلوم فلسطینی قوم کے حقوق کو تسلیم کرنے کے حوالے سے مزاحمتی فرنٹ، فلسطینی مختلف گروپ، اسلامی ممالک کی سفارتی کوششوں کی حمایت پر زور دیا.

خالد القدومی نے امریکی حکومت کے اس بیوقوفانہ اقدام کس مقصد کو فلسطینی قوم سے نمٹنا قرار دیتے ہوئے کہا کہ ان کے ایسے اقدام عالمی امن کے لئے ایک بڑا خطرہ ہے.

انہوں نے بعض عرب ممالک اور ناجائز صہیونی ریاست کے درمیان تعلقات کو تنقید کا نشانہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ عرب ممالک کی کمزوری جابر صہیونیوں کے اقتدار میں اضافہ ہونے کا باعث بن گئی ہے.

انہوں نے ناجائز صہیونی ریاست کے ساتھ تعلقات کو ناکام پالیسی قرار دیتے ہوئے القدس شریف کی آزادی کے لئے فلسطینی مزاحمتی گروپوں کے درمیان باہمی اتحاد اور یکجہتی پر زور دیا.

9393*274**

ہميں اس ٹوئٹر لينک پر فالو کيجئے. IrnaUrdu@