برطانوی وزیرخارجہ تہران میں دوطرفہ امور، علاقائی اور چندفریقی مسائل پر بات چیت کریں گے: ایرانی سفیر

لندن، 9 دسمبر، ارنا - برطانیہ میں تعینات ایران کے سفیر نے کہا ہے کہ برطانوی وزیر خارجہ 'بورس جانسن' کے دورہ تہران کے موقع پر دوطرفہ تعلقات، علاقائی امور اور چندفریقی مسائل پر مذاکرات ہوں گے.

ان خیالات کا اظہار 'حمید بعیدی نژاد' نے لندن میں صحافیوں کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ بورس جانسن کا یہ دورہ حالیہ برسوں میں کسی بھی برطانوی وزیرخارجہ کا پہلا ایران کا دورہ ہے، ماضی میں سابق برطانوی وزرائے خارجہ نے بھ ایران کے دورے کئے تھے مگر ان دوروں کا اصل مقصد یا تو جوہری مذاکرات تھا یا حالیہ برسوں میں ایران میں برطانوی سفارتخانے کو دوبار کھولنا تھا.

انہوں نے مزید کہا کہ برطانوی وزیرخارجہ بورس جانسن کے اس دورے کو بہت اہمیت حاصل ہے اور اس موقع پر دونوں ممالک کے درمیان مختلف موضوعات پر تفصیلی بات چیت ہوگی.

بعیدی نژاد نے کہا کہ قطعی طور پر اس دورے میں ایران اور برطانیہ جوہری معاہدے اور کے موثر نفاذ پر بھی گفتگو کریں گے.

ایران جوہری معاہدے پر برطانوی مؤقف کو مثبت قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یقینا دونوں ممالک جوہری معاہدے کے تحفظ کے حق میں ہیں کیونکہ اس کے ذریعے دونوں ممالک اقتصادی اور بینکاری سرگرمیوں کو فروغ دے سکتے ہیں.

انہوں نے کہا کہ برطانیہ ایران کے ساتھ بینکاری اور تجارتی روابط کو بڑھانے کے لئے پُرعزم ہے اور بارہا اس عزم کا اعادہ بھی کرچکا ہے.

ایرانی سفیر نے کہا کہ بورس جانسن اور ایرانی قیادت کے درمیان مختلف علاقائی مسائل اور بحران بشمول سعودی عرب کی پالیسی، شام اور یمن کی صورتحال پر بھی تبادلہ خیال ہوگا.

انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں توقع ہے کہ یمن میں جاری بحران کے خاتمے کے لئے برطانیہ اور سلامتی کونسل کے رکن ممالک سعودی عرب پر دباؤ ڈالیں گے.

ایرانی سفیر نے کہا کہ لبنان اور شام کے حوالے سے بھی تفصیلی مذاکرات کئے جائیں گے.

انہوں نے مزید کہا کہ برطانوی کمپنیاں ایران میں سرمایہ کاری کی خواہاں ہیں اور اس وقت دونوں ممالک نے ادویات کی پیدوار، صحت مراکز کی تعمیر اور کھیل شعبے میں اچھی سرمایہ کاری کرنے کے لئے آمادہ ہیں.

خیال رہے کہ برطانیہ کے وزیر خارجہ بورس جانسن آج ایک سیاسی اور اقتصادی وفد کی قیادت میں اسلامی جمہوریہ ایران کے دارالحکومت تہران روانہ ہوں گے.

274**

ہميں اس ٹوئٹر لينک پر فالو کيجئے. IrnaUrdu@