دہشت گرد، امت مسلمہ کے لئے بڑا خطرہ ہیں: یونانی مفتی اعظم

ایتھنز - ارنا - یونان کے مفتی اعظم 'حافظ جمالی' نے دہشت گرد گروہوں کے غیر انسانی اعمال کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ دہشت گرد عناصر عالم اسلام کی قلب و روح کو نقصان پہنچا رہے ہیں اور یہ حقیقت میں آج عالم اسلام کا اہم مسئلہ ہیں.

حافظ جمالي نے اسلامي ممالک ميں دہشت گرد گروہوں کے وحشيانہ اقدامات کا ذکر کرتے ہوئے بتايا کہ آج امت مسلمہ کے اہم مسائل ميں سے ايک دہشت گرد ہے جو اسلام کے مقدس نام پر نقصان پہنچانے کے ساتھ ساتھ اسلام کے حقيقي چہرہ کو مسخ کر کے بد صورت ديکھا رہے ہيں.

انہوں نے کہا کہ مسلم مذہبي رہنما ديکھ رہے ہيں کہ دہشت گرد، اسلام کے نام پر شام،عراق، لبنان، فلسطين سميت پورپي ممالک کے شہريوں کے خلاف ايسے بھيانک اور انسانيت کے خلاف اقدامات کر رہے ہيں اور اسلام کو بدنام کر رہے ہيں.

انہوں نے کہا کہ امام خميني(رح) نے ہميشہ قرآن کريم کي تعليمات پر مبني امت مسلمہ کے اتحاد اور يکجہتي پر زور ديا ہے کيونکہ تنازعات اور اختلافات کو دور کرنے سے دنيا اور امت مسلمہ کے درميان امن اور سلامتي کا قيام يقيني ہو گا.

انہوں نے کہا کہ بدقسمتي سے، اسلام کے دشمنوں کي سازشيں، اسلامي دنيا کے اتحاد کے قيام کے ليے بڑي رکاوٹ ہيں.

انہوں نے بتايا کہ ہميں يقين ہے کہ عالم اسلام کو ديني بھائيوں کي حيثيت سے ہميشہ ايک دوسرے کے ساتھ شانہ بہ شانہ کھڑا ہونا چاہئے اور ان کے درميان اتحاد، قرآن اور حضرت محمد (صلي اللہ عليہ وآلہ وسلم) کي تعليمات ميں سے ايک ہے.

يونان ميں تعينات اسلامي جمہوريہ ايران کے ثقافتي اتاشي ڈاکٹر'علي محمد حلمي' نے کہا کہ بدقسمتي سے، حاليہ سالو‎ں کے دوران اسلامي ممالک دہشتگردوں کے ہولناک جرائم کا شکار ہے اور اسلام فوبيا کے مقصد سے ايسي مجرمانہ کارروائيوں کا ارتکاب کررہے ہيں جبکہ اسلام رحمت، امن و سلامتي، بھائي چارے اور احترام کا دين ہے.

انہوں نے دہشتگردي اور انتہاپسندي کے خاتمے کے ليے مختلف ممالک کے مذہبي علما کے باہمي تعاون پر زور ديتے ہوئے بتايا کہ بدقسمتي سے خطے کے کچھ عرب ممالک دہشتگردوں کو مالي اور فوجي امداد دے رہے ہيں.

انہوں نے کہا تمام الہامي اديان کے پيروکارامن اور پرامن بقائے باہمي کے خواہاں ہيں تو امن کے قيام کے ليے مذہبي علما کو باہمي بات چيت کرني چاہيے اور ہم اس کا خير مقدم کرتے ہيں.

9410*271**