افغان عہدیدار کی دوطرفہ تعاون کو فروغ دینے پر ایرانی وزیر صحت کے کردار کی تعریف

کابل - ارنا - افغانستان کی وزارت صحت کے ترجمان نے ایرانی وزیر صحت کے حالیہ دورہ کابل کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ایرانی وزیر صحت نے دونوں ممالک کے درمیان باہمی تعاون کو نفاذ کے مرحلے تک لے جانے کے لئے نمایاں کردار ادا کیا ہے.

یہ بات 'وحید مجروح' نے منگل کے روز ارنا کے نمائندے کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہی.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران اور افغانستان کی وزارت صحت کے درمیان اچھے تعلقات برقرار رکھا اور باہمی تعاون پر عملدرآمد کا آغاز ہوتا ہے.

مجروح نے کہا کہ ایرانی وزیر صحت کے افغانستان کے حالیہ دورے کے موقع پر دونوں فریقین نے پانچ معاہدوں پر دستخط کر دیتے ہوئے اور باہمی دلچسبی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا.

انہوں نے کہا کہ جلد سے دونوں ممالک کے درمیان ایک مشترکہ تکنیکی وفد قائم کیا جائے گا اور دو اگلے مہینے تک معاہدے کے تحت اس وفدوں اپنی ذمہ داریوں کے نفاذ کا آغاز کریں گے.

افغان وزارت صحت کے ترجمان نے کہا کہ اس سے پہلے ایرانی وزارت صحت نے افغان ڈاکٹروں کی صلاحیت کو فروغ دینے کے لئے کوششیں کی ہے اور اس کے نتیجے میں افغان ہرات شہر میں ایرانی اور افغان ڈاکٹروں کی باہمی مدد کے ساتھ 70 افراد کے گردے ٹرانسپلانٹ ہوگئے.

افغان عہدیدار نے کہا کہ اس کے بعد سرکاری طور پر دونوں ممالک کی وزارت صحت کے تمام معاہدوں کا نفاذ ہوجائے گا.

انہوں نے مزید کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان ایک معاہدے کے تحت افغان ڈاکٹریں اسلامی جمہوریہ ایران میں مختصر اور طویل مدت کے دوران خاص اور متعلقہ مخصوص دل، دماغ، گردے اور جگر کے آپریشن کے حصوں میں تربیت دی جائیں گی.

انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان سیاحتی صحت، دونوں ممالک کے ہسپتالوں کے درمیان باہمی تعاون، بلڈ ٹرانسفیوژن، دوائیں کی برآمدات اور اس کی پیداواری کی منتقلی، خراب معیار دوائیں کی منشیات کی روک تھام کے معاہدون پر دستخط کیا گیا.

مجروح نے کہا کہ سالانہ 50 طبی افغان طلبا اسلامی جمہوریہ ایران میں تربیت دی جایئں گی.

یاد رہے کہ ایرانی وزیر صحت 'سید حسن قاضی زادہ ہاشمی' نے گزشتہ بدھ کے روز افغان دارالحکومت کابل کا دورہ کرتے ہوئے اور اپنے افغان ہم منصب اور دوسرے حکام کے ساتھ دونوں ممالک کے درمیان طبی شعبے میں باہمی تعاون کو فروغ دینے پر تبادلہ خیال کیا گیا.

9393*274**