فلسطینیوں پر صہیونیوں کے مظالم نئے انتفاضہ کا باعث بنیں گے: ایرانی مشیر

تہران - ارنا - ایرانی اسپیکر کے مشیر برائے بین الاقوامی امور نے کہا ہے کہ ناجائز صہیونی حکومت کی طرف سے مسلمانوں کے بیت المقدس میں داخل ہونے کے اعلان کردہ نئے قوانین مقبوضہ فلسطین میں نئے انتفاضہ کا آغاز کریں گے.

حسين امير عبداللھيان نے اپنے ٹيلي گرام چينل پر ناجائز صہيوني حکومت کي مظلوم فلسطيني نمازيوں پر ڈھائے جانے والے مظالم پر اپني تشويش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اسلامي جمہوريہ ايران، فلسطيني مزاحمتي گروہوں کي ناجائز صہيوني حکومت کے خلاف تحريک کي حمايت کا سلسلہ جاري رکھے گا.

انہوں نے فلسطين کي فتح تنظيم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ جلد صہيوني حکومت سے اپنے روابط منقطع کردے.

فلسطيني مزاحمتي تنظيم کے مختلف گروہوں نے ناجائز صہيوني حکومت کي جانب سے بيت المقدس کے دروازے پر ميٹل ڈيٹيکرز لگانے کے خلاف جمعہ کو يوم خشم کے طور پر منايا جس ميں صہيوني فوجيوں کي پرتشدد کاروائي ميں تين نہتے فلسطيني نوجوان شہيد اور سينکڑوں مرد خواتين اور نوجوان زخمي ہوگئے تھے.

نائب ايراني وزير خارجہ نے کہا کہ مقبوضہ فلسطين ميں صہيونيوں کي طرف سے پرتشدد کاروائي کے بعد 400 سے زائد فلسطينيون کا زخمي ہونا ناقابل قبول اقدام ہے اور يہ انساني حقوق کي کھلا خلاف ورزي ہے.

انہوں نے اسلامي ممالک سے کہا کہ وہ ان مظالم کے خلاف بھرپور کاروائي کے لئے متحد ہوجائيں.

انہوں نے مزيد کہا کہ ہم سمجھتے ہيں کہ اس کھلي بربريت کے خلاف مظلوم فلسطيني عوام بيت القدس کي حفا‍ظت کے لئے بھرپور دفاعي کاروائي کا حق رکھتے ہيں اور ناجائز صہيوني حکومت کي ان سازشوں کو پھر ناکام بناديں گے.

انہوں نے کہا کہ اسلامي جمہوريہ ايران دنيا کے مظلوم عوام کي حمايت جاري رکھے گا اور مظلوم فلسطيني عوام کے اقدامات کي حمايت کرے گا.

1*271**