ایران اور ہمسایوں کے تعلقات خراب کرنے کی سازش میں امریکی،صہیونی لابی ملوث ہے: تہران امام جمعہ

تہران - ارنا - ایرانی دارالحکومت کے امام جمعہ نے کہا ہے کہ امریکہ اور ناجائز صہیونی ریاست کی لابی خطے میں ایسی سازش میں سر جوڑ کر بیٹھی ہے کہ وہ اسلامی جمہوریہ ایران اور پڑوسی ممالک کے درمیان تعلقات کو خراب کرے.

ان خیالات کا اظہار آیت اللہ 'سید احمد خاتمی' نے آج تہران میں نماز جمعہ کے ایک عظیم اجتماع میں نمازیوں سے خطاب کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ ایران کے ساتھ اچھے تعلقات میں تمام پڑوسیوں کا فائد ہے مگر صہیونی اور امریکی لابی ان تعلقات کو متاثر کرنے کی سازش کررہی ہیں.

انہوں نے ایران اور کویت کے درمیان حالیہ صورتحال کے حوالے سے کہا کہ آج کل ایران کے خلاف نئے کھیل کا آغاز کردیا گیا ہے جس میں امریکی اور صہیونی لابی واضح طور پر ملوث ہے.

تہران کے امام جمعہ نے علاقائی ممالک کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ چاہیں یا نہ چاہیں تسلیم کریں یا نہ کریں مگر اسلامی جمہوریہ ایران اس خطے کا طاقتور ملک ہے، ایران کے ساتھ اچھے تعلقات میں آپ لوگوں کا فائدہ ہے اور آپ لوگوں کو اس دوستی کی بڑی ضرورت ہے.

آیت اللہ خاتمی نے بتایا کہ ایران نے یہ ثابت کردیا ہے کہ جو ہمسایہ ممالک اس کے ساتھ اچھے تعلقات میں دیانت داری دیکھائیں تو وہ بھی ان کے ساتھ رواداری سے پیش آتا ہے، لہذا علاقائی ممالک جان لیں کہ ایران سے دوستی میں ان کا فائدہ ہے اور امریکہ کے ساتھ دوستی سے کوئی اچھا انجام نہیں ہوگا.

انہوں نے کہا کہ امریکہ کی نظر میں جب آپ لوگوں کی حیثیت ختم ہو تو وہ صدام کی طرح رویہ برتے گا.

تہران کے امام جمعہ نے آئندہ حکومت اور نئی کابینہ کے حوالے سے کہا کہ ہم سب اسی انتطار میں ہیں کہ کابینہ کس طرح کی ہوگی، تاہم قانون نے راستہ دیکھایا ہے اور معمول کے مطابق نئے صدر کی جانب سے کابینہ کے لئے امیدواروں کے نام پارلیمنٹ کو دیا جائے گا اس کے بعد پارلیمنٹ ان کو اعتماد کا ووٹ دے گی.

انہوں نے مزید کہا کہ وہ ایرانی قوم کی جانب سے صدر اور اسپیکر سے درخواست کرتے ہیں کہ ایک ایسی کابینہ تشکیل دی جائے جو عوام کے لئے کام کرے، کیوں کہ قوم اب نعروں سے تنگ آگئی ہے لہذا عوامی مشکلات کا ازالہ ہونا چاہئے.

٢٧٤**