امريكہ، جوہري معاہدے كي روح كي خلاف ورزي كر رہا ہے: خرازي

لندن - ارنا - اسلامي جمہوريہ ايران كے اعلي سياستدان نے ايران مخالف نئي امريكي پابنديوں كو جوہري معاہدے كي روح كي خلاف ورزي قرار ديا ہے.

يہ بات ايران كي خارجہ تعلقات كونسل كے سربراہ 'كمال خرازي' نے ارنا كے نمائندے كے ساتھ بات چيت كرتے ہوئے كہي.

انہوں نے كہا كہ امريكي انتظاميہ نے نا ہي جوہري معاہدے پر عمل درآمد كرنے كي بات كي ہے نہ ہي اس كي مخالف كي بلكہ صرف معاہدے كو روكنے كے لئے كچھ اقدامات كئے ہيں.

انہوں نے كہا كہ يقينا امريكہ اپنے آپكو جوہري معاہدے پر پابند رہنے كي ضرورت محسوس نہيں كرا رہا اس لئے وہ اس معاہدے كے راستے پر مختلف مشكلات اور مسائل پيدا كررہا ہے.

انہوں نے مزيد كہا كہ يورپي يونين خود كو جوہري معاہدے كي پيروي پر پابند سمجھتي ہے ليكن دوسري طرف وہ امريكہ كي جانب سے پيدا كئے گئے مسائل كا سامنا كررہي ہے.

انہوں نے كہا كہ جوہري معاہدہ ايك بين الاقوامي معاہدہ ہے اور كوئي بھي فريق اس سے غير منسلك نہيں ہوسكتا ہے.

ايران اور برطانيہ كے روابط كا حوالہ ديتے ہوئے انہوں نے كہا كہ ايران كے حوالے سے برطانيہ كي پاليسي غلط راستہ پر گامزن ہے.

انہوں نے سعودي عرب كو اسلحہ بيچنے كے برطانيہ كے اقدام پر تنقيد كرتے ہوئے كہا كہ سعودي عرب برطانيہ سے حاصل كردہ اسلحہ كو يمن كي جنگ ميں استعمال كررہا ہے جس سے بے گناہ يمني لوگ مارے جارہے ہيں.

1*271**