فلسطینی عوام کے حقوق کیلئے صہیونیوں کیخلاف مزاحمت ناگزیر ہے: ایرانی مشیر

تہران - ارنا - ایرانی اسپیکر کے مشیر برائے بین الاقوامی امور نے کہا ہے کہ فلسطینی رہنما اور عوام جان لیں کہ فلسطین کو حق دلانے کے لئے قابض صہیونیوں کے خلاف مزاحمتی کا سلسلہ جاری رکھنا ہوگا.

یہ بات 'حسین امیرعبداللھیان' جو بین الاقوامی فلسطین کانگریس کے سیکرٹری جنرل بھی ہیں نے ہفتہ کے روز اپنے ایک بیان میں کہی.

انہوں نے صہیونی فورسز کی جانب سے فلسطینی نمازیوں کو مسجد الاقصی می داخلے سے روکنے پر اپنے ردعمل میں کہا کہ بیت المقدس مسلمانوں کا پہلا قبلہ ہے اور 1969 سے یہاں پر صہیونی قبضے کے بعد یہ پہلی بار ہے کہ صہیونی فورسز ایسے شرمناک اقدام کیا اور جمعہ کے روز نمازیوں کو مسجدالقصی کے اندر جانے کو روک دیا.

انہوں نے کہا کہ قابض صہیونیوں کی کوشش ہے کہ اپنے نام نہاد دارالحکومت کو تل ابیت سے بیت المقدس منتقل کرے جبکہ عالمی برادری کی خاموشی، امریکی حکومت کی بے پناہ حمایت اور بعض عرب حکمرانوں کی مجرمانہ خاموشی کی وجہ سے جابر صہیونی حکمران کے عزائم مزید جارحانہ ہوگئے ہیں.

ایرانی اسپیکر کے مشیر نے گزشتہ دنوں شہید ہونے والے تین فلسطینیوں کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے مسجد الاقصی میں نمازیوں پر پابندی اور القدس کے مفتی شیخ محمد حسین کی گرفتاری کی شدید الفاظ میں مذمت کی.

انہوں نے ان فریقین کو مخاطب کیا جو صہیونیوں کے ساتھ مفاہمت کرنے کے خیالوں میں ہیں کہ اس حقیقت کو ماننا پڑے گا کہ فلسطینی عوام کو حقوق دلانے کے لئے قابض صہیونیوں کے خلاف مزاحمت جاری رکھنی ہوگی.

ایرانی سفارتکار نے دنیائے اسلام اور عالمی برادری سے مطالبہ کیا کہ وہ مقبوضہ فلسطین میں صہیونیوں کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزی اور مظالم کا نوٹس لیں.

٢٧٤**