ایرانی طلبا پر تعلیمی پابندیوں کا خاتمہ جوہری معاہدے کا ثمر ہے: ظریف

تہران - ارنا - ایران کے وزیرخارجہ نے بین الاقوامی سائنسی میدان میں حصہ لینے کے حوالے سے اسلامی جمہوریہ ایران کی صلاحیت کا ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایرانی طالب علموں پر سے تعلیمی پابندیوں کا خاتمہ جوہری معاہدے کے ثمرات میں سے ہے.

ان خیالات کا اظہار 'محمد جواد ظریف' نے پیر کے روز تہران میں تربیت مدرس یونیورسٹی کی جانب سے سائنسی سفارتی، سائنسی اور ٹیکنالوجی کے مواقع کے عنوان سے منعقدہ ایک سمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا.

اس موقع پر انہوں نے کہا کہ جوہری معاہدے کے نفاذ کے بعد غیرملکی جامعات میں بعض شعبوں میں ایرانی طالب علموں کی آمد پر لگائی جانے والی پابندی کا خاتمہ ملکی کامیابی میں ایک اہم حصہ ہے.

انہوں نے مزید کہا کہ اب بین الاقوامی سطح پر اسلامی جمہوریہ ایران سائنس اور تعلیم کے مختلف شعبوں میں شراکت داری کرسکتا ہے کیونکہ ایران اس قابل ہے کہ وہ سائنسی میدان میں اپنی صلاحیت اور قابلیتوں کو بروئے کار لائے.

ظریف نے کہا کہ آج خطے کی بعض طاقتیں اپنی بقا اور اندرونی طاقت کی خاطر غیرعلاقائی طاقتوں کی مدد پر انحصار کرتی ہیں مگر اسلامی جمہوریہ ایران اس کے برعکس ہے اور وہ اپنی قوم کی خودمختاری اور آزاد عزم و ارادوں پر انحصار کرتا ہے.

انہوں نے کہا کہ اسلامی جمہوریہ ایران کے پاس اتنی صلاحیت اور طاقت ہے کہ وہ اپنے اندرونی وسائل کے ذریعے اپنی پوزیشن کو مضبوط کرسکتا ہے.

ظریف نے مزید کہا کہ بین الاقوامی سائنسی شعبے میں ایران کی شراکت داری سے عالمی سطح پر ملک کی پوزیشن مزید مضبوط ہوگی.

٢٧٤**