سفارتکاری سے زیادہ فن کی زبان کارآمد ہے: ایرانی ترجمان

تہران - ارنا - ایرانی دفترخارجہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ اکثر اوقات سفارتکاری اور سیاسی طریقوں سے زیادہ ہمیں فن کی زبان کی ضرورت ہے اور اس طریقہ کار کا ہم اقتصادی میدان میں بھی استعمال کرسکتے ہیں.

'بہرام قاسمی' نے اتوار کے روز ارنا نیوز ایجنسی کے ساتھ خصوصی گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ عوام کے درمیان مضبوط مراسم کے قیام سے ہی حکومتوں کے درمیان سیاسی روابط اور دوطرفہ تعلقات کی بنیاد مضبوط ہوگی.

انہوں نے مزید کہ آج کی دنیا میں ممالک، حکومتوں اور قوموں کے درمیان تعلقات کے فروغ کے لئے مختلف زبان استعمال کیا جاسکتا ہے، کسی شرائط میں سیاسی زبان، کبھی اقتصادی زبان یا کبھی ثقافتی کی زبان، مگر ایسا موقع بھی آئے گا جہاں صرف سیاسی یا اقتصادی زبان کافی نہیں ہوگی.

قاسمی نے کہا کہ دنیا کی موجودہ پیچیدہ صورتحال، خطے کے ابتر حالات، ایرانی فوبیا کی سازشیں اور بعض علاقائی اور غیرعلاقائی ممالک کی جانب سے ایران کے خلاف من گھڑت دعووں کے تناظر میں ہمیں پبلک ڈپلومیسی اور فن کی زبان کے طریقہ کار کو اپنانے کی ضرورت ہے جس کا مقصد ایسی شیطانی سازشوں کو ناکام کرنا ہے.

اس موقع پر انہوں نے ایران اور اٹلی کے تعلقات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ اٹلی یورپ کا ایک اہم ملک اور یورپی یونین کی مشترکہ اقتصادی منڈی کے بانی ممالک میں سے ہے جس کے ساتھ ہمارے اچھے تعلقات بالخصوص ثقافتی شعبے میں قریبی تعاون ہے.

بہرام قاسمی جو اٹلی میں ایران کے سابق سفیر بھی رہ چکے ہیں، نے مزید کہا کہ سیاسی اور اقتصادی سرگرمیوں کو فروغ دینے کے بعد اب ہم اٹلی کے ساتھ ثقافت کے شعبے میں مشترکہ تعلقات کو بڑھانے کے لئے پُرعزم ہیں.

اس موقع پر انہوں نے ایران اور اٹلی کے فنکاروں کے درمیان مشترکہ موسیقاری تقاریب کے انعقاد اور تاریخی اور نوادراتی شعبوں میں باہمی تعاون کے فروغ کا خیرمقدم بھی کیا.

٢٧٤**