دہشتگردوں کے خلاف طاقت کی زبان استعمال کرنی چاہیے: ایرانی کمانڈر

تہران - ارنا - ایران کی رضاکار فورس (بسیج) کے کمانڈر نے تکفیری دہشتگردوں کے وحشیانہ جرائم اور تشدد کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہمیں ایسے دہشتگرد گروہوں کے خلاف طاقت کی زبان استعمال کرنی چاہیے.

يہ بات بريگيڈير جنرل 'غلام حسين غيب پرور' نے ہفتہ كے روز ايك خصوصي تقريب ميں خطاب كرتے ہوئے كہي.

اس موقع پر انہوں نے مزاحمتي فرنٹ كے فروغ كي اہميت پر زور ديتے ہوئے كہا كہ شہدائے مدافع حرم قابل قدر مزاحمت كررہے ہيں اور ہميں خواب غفلت سے بيدار ہونے كي ضرورت ہے اور ناجائز صہيوني رياست اور امريكہ كے ساتھ تعلقات قائم كرنا بڑي غلطي ہے.

جنرل غيب پرور نے كہا كہ اسلامي انقلاب كے دوران ايراني قوم نے امام خميني (رح) كي حمايت اور اسلامي انقلاب كے تمام نازك لمحوں ميں اپنے رہبر كي ہدايات كے مطابق عمل كيا ہے.

انہوں نے اس بات پر زور ديا كہ اعلي ايمان، سمجہ، بصيرت اور دشمن كي پہچان ايراني قوم كي اہم خصوصيات ميں سے ايك ہيں.

انہوں نے مزيد كہا كہ گزشتہ تجربات نے ثابت كيا ہے كہ ايراني غيور قوم كے خلاف دباؤ بڑھانے سے ان كي مزاحمت ميں مزيد اضافہ ہوسكتا ہے.

ايراني كمانڈر نے گزشتہ عرصے ميں دشمنوں كي سازشوں كي طرف اشارہ كرتے ہوئے كہا كہ دشمن اسلامي جمہوريہ ايران كي ناكامي چاہتے ہيں اور ايراني بہادر قوم نے تمام طاقت كے ساتھ دشمنوں كے حملوں كي مزاحمت كي ہے.

ايراني عوامي فورس كے كمانڈر نے كہا كہ اب تكفيري دہشتگرد اسلام كے نام سے اسلامي انقلاب كے خلاف كاروائي كررہے ہيں مگر ايراني دلير نوجوان مدافع حرم كي فورس كے طور پر دشمنوں كي سازشوں كے خلاف مزاحمت كر كے ان كي ناكامي كا باعث بنتے ہيں.

انہوں نے اس بات پر زور ديا كہ ايراني سپاہ پاسداران اپني سيكورٹي اور دفاعي صلاحيتوں كے ساتھ ہمارے وطن عزيز كے دفاع ميں دشمن كے خلاف جنگ لڑ رہا ہے.

*9393*274**