ایرانی عدلیہ دنیا میں مظلوموں کی حمایت میں آواز بلند کرے : آیت اللہ خامنہ ای

تہران - ارنا - قائد اسلامی انقلاب آیت اللہ خامنہ ای نے ایرانی عدلیہ پر زور دیا ہے کہ وہ عالمی قانونی تبدیلیوں پر نظر رکھتے ہوئے قانون اور انصاف کے ذریعے سے دنیا کے مظلوموں بشمول میانمار اور کشمیر کے مسلمانوں کی حمایت میں آواز بلند کرے.

ان خیالات کا اظہار سپریم لیڈر حضرت آیت اللہ العظمی 'سید علی خامنہ ای' نے پیر کے روز ایرانی عدلیہ کے سربراہ اور سنئیر عدالتی حکام کے ساتھ ایک ملاقات میں خطاب کرتے ہوئے کیا.

اس ملاقات میں عدلیہ کے سربراہ آیت اللہ صادق آملی لاریجانی، عدلیہ کے نائب سربراہ اور ترجمان غلام حسین محسنی اژہ ای، اٹارنی جنرل محمد جعفری منتظری سمیت عدلیہ سے تعلق رکھنے والے ملک بھر کے سنئیر حکام شریک تھے.

اس موقع پر انہوں نے عدالتی شعبوں سے متعلق سرگرمیوں میں تبدیلی اور جہادی ویژن کی حکمت عملی کو اپنانے پر زور دیا.

قائد انقلاب نے ملکی نظام اور اندرونی مینجمنٹ کے حوالے سے ایرانی عدلیہ کے اہم کردار کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا ہے کہ عدلیہ کو چاہئے کہ معاشرے میں قوم کے حقوق کا دفاع کرتے ہوئے قانون توڑنے والوں کے خلاف سخت رویہ اپنائے.

انہوں نے وطن عزیز ایران میں عدلیہ کی اہم پوزیشن بالخصوص اس کے حکومت اور پارلیمنٹ کے ساتھ کلیدی تعاون کا حوالہ دیتے ہوئے فرمایا کہ عدلیہ کو چاہئے کہ عوامی حقوق اور ملکی قانون توڑنے والوں کے ساتھ سختی سے پیش آئے اور ساتھ ساتھ معاشرے میں عوام کی حقوق کی فراہمی اور ان کی جائز آزادی کی خواہشات کا دفاع کرنے کا پرچم اونچا رکھے.

آیت اللہ خامنہ ای نے مزید فرمایا کہ ایرانی عدلیہ کو چاہئے کہ بین الاقوامی مسائل بالخصوص پابندیوں، اثاثوں پر امریکی قبضے، دہشتگردی اور دنیا کی مظلوم شخصیات جیسا کہ نائیجیریان کے نامور عالم شیخ الزاکزاکی، میانمار اور کشمیر کے مسلمانوں کے حوالے سے اپنی قانونی پوزیشن کا استعمال کرتے ہوئے اپنی حمایت یا مخالفت کے بارے میں دنیا کے سامنے دوٹوک مؤقف اپنائے.

٢٧٤**