ايران شام ميں جنگ کا اصلي اور بڑا فاتح ہے:صہيوني تجزيہ کار

بيروت - ارنا - صہيوني تجزيہ کار کا کہنا ہے کہ اسلامي جمہوريہ ايران شام ميں جنگ کا بڑا فاتح ہے اور ناجائز صہيوني رياست اور تمام دنيا کو اس حقيقت تسليم کرنا چاہيئے.

يہ بات مقبوضہ فلسطين ميں ناجائز صہيوني رياست کے تجزيہ کار 'مردخاي کيدار' نے اتوار کے روز اپنے شائع ہونے والے ايک مضمون ميں کہي.

اس موقع پر انہوں نے خطے ميں ايران کے بڑھتے ہوئے خطرے کا حوالہ ديتے ہوئے کہا کہ امريکي صدر جانتا نہيں ہے کہ خطے ميں اسلامي جمہوريہ ايران کي طاقت بڑھ رہي ہے.

انہوں نے کہا کہ ايران اوباما اور ٹرمپ کي حکومتوں کي غلط پاليسيوں کے مقابلے ميں شامي جنگ کا اصلي فاتح ہے اور دنيا بھر ميں کوئي بھي شام سے ايراني فوجيوں کو نہيں نکال سکتا اسي لئے اسرائيل، يورپ اور امريکہ کو عراق، شام اور لبنان ميں اس ملک کا اثر ورسوخ تسليم کرنا چاہيئے.

صہيوني تجزيہ کار نے کہا کہ حزب اللہ نے ايران کے ساتھ زميني راستے کے ذريعہ دوطرفہ تعلقات قائم کيا ہے اسي لئے اس تحريک کے سربراہ 'سيد حسن نصراللہ' اعتماد اور طاقت کے ساتھ اسرائيل کے خلاف کاروائي اور ناجائز صہيوني رياست اپني سرحدوں کو محفوظ بنانے کے لئے کنکريٹ ديوار تعمير کر رہا ہے.

انہوں نے اس بات پر زور ديا کہ اسلامي جمہوريہ ايران اور حزب اللہ ہماري سرحدوں کے لئے ايک بڑا خطرہ ہيں.

9393*271**