ایران، روس کے تجارتی تعلقات میں 2015 میں 80 فیصد کا اضافہ

تہران - ارنا - روس میں تعینات اسلامی جمہوریہ ایران کے سفیر نے کہا ہے کہ 2015 میں ایران اور روس کے درمیان تجارتی تعلقات کی شرح میں 80 فیصد اضافہ ہوا ہے اور ایرانی صدر روس کے دارالحکومت ماسکو کا دورہ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں.

يہ بات ايراني سفير 'مہدي سنائي' نے پير كے روز ايران اور روس كے درميان تعلقات كي 515 ويں سالگرہ كي مناسبت سے منعقدہ ايك مشتركہ كانفرنس سے خطاب كرتے ہوئے كہي.



اس موقع پر انہوں نے كہا كہ ماہرين كے مطابق گزشتہ سالوں سے اب تك دونوں ممالك كے درميان سياسي، اقتصادي، تجارتي، ثقافتي، سيكورٹي اور علاقائي تعاون كے حوالے سے اچھے كثيرالجہتي تعلقات موجود ہيں اور اقتصادي تعلقات كي شرح ميں 80 فيصد كا قابل قدر اضافہ ہوا ہے.



انہوں نے مزيد كہا كہ دونوں ممالك كے اعلي حكام اسٹريٹجك تعلقات قائم كرنے كے لئے پرعزم ہيں.



ايراني سفير نے اس بات پر زور ديا كہ دونوں ممالك كے صدور اور اعلي حكام كے درميان مسلسل مذاكرات اور روس كي جانب سے ايران كو S300 ميزائل دفاعي نظام دينا، دونوں ممالك كے درميان اچھے اسٹريٹجك تعلقات كو فروغ دينے كي علامت ہے.



انہوں نے بتايا كہ ايراني صدر حسن روحاني ايك اعلي سطحي سياسي، اقتصادي اور ثقافتي وفد كے ہمراہ روس كے دارالحكومت ماسكو كا دورہ كريں گے اور اس دورے كے حوالے سے منصوبہ بندي جاري ہے.



اس موقع پر انہوں نے مزيد كہا كہ مغرب سميت امريكہ كا اصلي مقصد ايران اور روس كے درميان اچھے تعلقات كو سبوتاژ كرنا ہے.



*9393*271**