ایران کے 9.9 ارب ڈالر کے منجمد اثاثے بحال کر دئیے گئے: ایرانی دفتر خارجہ

تہران - ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران کی وزارت خارجہ کی رپورٹ کے مطابق، ایران کے خلاف عالمی پابندیوں کے خاتمے کے بعد 9.9 ارب ڈالر کے منجمد اثاثے نقد رقم کی صورت میں دنیا کے مختلف بینکوں سے موصول ہو گئے ہیں.

يہ رقم جو متحدہ عرب امارات ، برطانيہ ، بھارت ، يونان ، اٹلي اور ناروے كے بينكوں ميں موجود تھي ايران پر عالمي پابنديوں كے نفاز كے بعد ان ممالك كے بينكوں ميں منجمد تھي اب دوبارہ اسلامي جمہوريہ ايران كے حوالے كر دي گئي ہے.



اس سے پہلے امريكہ كے اخبار وال سٹريٹ جرنل نے اپني ايك رپورٹ ميں كہا تھا كہ جوہري معاہدے كے نفاذ كے بعد ايران نے مختلف غير ملكي بينكوں ميں اپنے منجمد شدہ 10 ارب ڈالر كے اثاثوں كو نقد رقم اور سونے كي شكل ميں وصول كيا ہے.



ايران كے مركزي بينك نے حال ہي ميں اعلان كيا كہ ان كي اكاؤنٹ آسٹريا، اٹلي، جاپان، سوئٹزر لنيڈ، بيلجيم، سپنك، بھارت، جنوبي كوريا، چنل، تركي اور روس ميں فعال ہو گيا ہے اور ديگر ممالك ميں بھي يہ سلسلہ جاري ہے.



اس رپورٹ ميں مزيد كہا گيا ہے كہ ايران كے 238 غير ملكي بينكوں كے ساتھ رابطے بحال ہوئے ہيں اور اس حوالے سے مزيد پيش رفت جاري ہے.



ايران كے دفتر خارجہ كي رپورٹ كے مطابق، جرمني، اٹلي، جاپان، تركي، متحدہ عرب امارات، سوئٹزرلينڈ اور چنو ميں ايران كے بينك اكاؤنٹ فعال ہو گئے ہيں جن سے ايران اپني تيل كے آمدني كي رقوم وصول كررہا ہے.



271**