ترک حکام کے غیرتعمیری بیانات سے شامی بحران مزید پیچیدہ ہوگا: ایران

تہران - ارنا - ایرانی محکمہ خارجہ کے ترجمان نے کہا ہے کہ ترک حکام کے غیرتعمیری بیانات، شام کے بحران کو مزید پیچیدہ کریں گے اور اس صورتحال کو سیاسی ذریعے سے حل کرنے کی راہ میں بھی مشکلات پیدا ہوگی.

يہ بات 'بہرام قاسمي' نے ترك وزير خارجہ كے حاليہ بيان پر اپنے رد عمل كا اظہار كرتے ہوئے كہي.



انہوں نے مزيد كہا كہ شام كے حوالے سے سہ فريقي عمل ميں روس اور تركي كے ساتھ ايران بھي اس عمل كا ايك فريق ہے اور ہم توقع ركھتے ہيں كہ دوسرے فريق بھي شام كے حوالے سے ہونے والي مفاہمت پر من و عن عمل كريں گے اور ايسے فيصلے نہيں ہوں گے جس سے مشتركہ مفاہمت كي خلاف ورزي ہو.



ترجمان دفترخارجہ نے كہا كہ شامي حكومت مخالف گروہ ملك ميں جاري جنگ بندي كي مسلسل خلاف ورزي كر رہے ہيں اور مصدقہ ثبوت كے مطابق باغيوں كي جانب سے صرف ايك ہي دن ميں 45 بار فائربندي كي خلاف ورزي ہوئي ہے.



انہوں نے ترك حكام كو تجويز دي ہے كہ اگر وہ سہ فريقي عمل كے تحت شام ميں پائيدار فائربندي كے خواہاں ہيں تو آپ كو چاہئے فائربندي كے قيام كے لئے مكمل يقين دہاني كرائيں اور خلاف ورزي كرنے والے گروہوں كے خلاف ايكشن ليں.



بہرام قاسمي نے اس بات پر زور ديا كہ اسلامي جمہوريہ ايران، شام ميں پائيدار جنگ بندي كے نفاذ اور اس ملك كے بحران كے حل كے لئے اپنے تعاون جاري ركھے گا.



٢٧٤**