ایران،ترکی صدور کی ملاقات/خطی مسائل کا حل،انسداد دہشتگردی پر مشترکہ تعاون پر اتفاق

نیو یارک - ارنا - اسلامی جمہوریہ ایران اور ترکی کے صدور نے ایک ملاقات کے دوران علاقائی بحرانوں کے حل بالخصوص شام اور عراق میں انسداد دہشتگردی پر مشترکہ تعاون کے لئے اپنے عزم کا اظہار کیا.

'حسن روحاني' اور 'رجب طيب اردگان' كے درميان يہ ملاقات اقوام متحدہ كے 71ويں سالانہ اجلاس كے موقع پر ہوئي جس ميں فريقين نے دوطرفہ تعلقات سميت علاقائي اور بين الاقوامي تازہ ترين صورتحال پر تبادلہ خيال كيا.



اس موقع پر ايراني صدر نے كہا كہ اسلامي جمہوريہ ايران تمام مراحل اور صورتحال ميں ترك قوم اور حكومت كا دوست اور ان كے شانہ بہ شانہ كھڑا ہے.



انہوں نے اس بات پر زور ديا كہ ايران، تركي كے ساتھ مختلف شعبوں بالخصوص ٹرانسپورٹيشن، صنعت اور توانائي شعبوں ميں تعاون كو مزيد بڑھانے كے لئے آمادہ ہے.



صدر روحاني نے مزيد كہا كہ دوطرفہ تعلقات كو فروغ دينے كے لئے ايران اور تركي كے نجي شعبوں كو كردار ادا كرنے كے لئے اچھي فضا قائم كرني چاہيے.



تركي ميں فوجي بغاوت كے حوالے سے انہوں نے كہا كہ ايران تركي كي قانوني حكومت كي حمايت كرتا ہے. ہم نے اس فوجي بغاوت كي شديد مذمت كي ہے جبكہ بعض طاقتيں اپنے مفادات كے لئے علاقائي صورتحال پر دوہرہ معيار اپنا رہي ہيں.



انہوں نے خطي انسداد دہشتگردي مہم بالخصوص شام اور عراق ميں دہشتگرد عناصر كے خاتمے كے لئے ايران اور تركي كے قريبي تعاون كي اہميت پر زور ديا.



اس موقع پر ترك صدر نے ناكام فوجي بغاوت كے خلاف اسلامي جمہوريہ ايران كے مؤقف اور ترك حكومت كي حمايت كو سراہتے ہوئے اس اميد كا اظہار كيا كہ ايران، تركي ميں جمہوريت كے عمل كي حمايت جاري ركھے گا.



صدر اردگان نے مزيد كہا كہ ايران اور تركي عالم اسلام كے دو اہم ملك ہيں جو اسلام مخالف سازشوں اور دشمنوں كے عزائم كے خاتمے كے لئے مشتركہ تعاون پر اہم كردار ادا كرسكتے ہيں.





۲۷۴**